میری بیٹی کو ناحق قتل کیا گیا ہے: سابق سفیر

منگل کی شب وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں سابق سفیر شوکت مقدم کی صاحبزادی نور مقدم کے قتل میں ایف آئی آر کا اندراج ہو گیا ہے۔

پولیس حکام کے مطابق ملزم ظاہر جعفر کو ڈیوٹی مجسٹریٹ کے سامنے پیش کر کے تین روزہ جسمانی ریمانڈ بھی لے لیا گیا ہے جس میں اب معاملے کی مزید تفتیش کی جائے گی۔

تھانہ کوہسار پولیس نے والد شوکت علی مقدم کی مدعیت میں قتل کی دفعہ 302کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

ایف آئی آر کے مطابق شوکت مقدم نے کہا کہ ’جولائی 19کو نور مقدم میری اور اہلیہ کی غیر موجودگی میں گھر سے نکلی۔ بیٹی کو فون ملایا تو نمبر بند تھا بعد ازاں نورکے دوستوں سے رابطہ کیا۔ کچھ دیر بعد نور کا ٹیلی فون آیا کہ دوستوں کے ساتھ لاہور جا رہی ہوں۔  نور نے ایک دو دن میں واپس آنے کا کہا۔‘

شوکت مقدم نے مزید لکھا کہ ’منگل دوپہر کو ظاہر جعفر جو معروف بزنس مین ذاکر جعفر کا بیٹا ہے، اس کا فون آیا کہ نور اس کے ساتھ نہیں ہے۔ ذاکر جعفر کی فیملی کے ساتھ ہماری جان پہچان ہے۔‘

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

’رات کو تھانہ کوہسار سے کال آئی کہ نور مقدم کا قتل ہو گیا ہے۔ پولیس سٹیشن پہنچا تو وہ ایف سیون فور میں واقع گھر پر مجھے لے گئے، وہاں جا کر دیکھا تو میری بیٹی کا گلا کٹا ہوا تھا۔‘ انہوں نے مزید لکھا کہ ’تیز دھار آلے سے سر کاٹ کر جسم سے الگ کر دیا گیا تھا، بیٹی کی لاش کو شناخت کیا۔‘

انہوں نے کہا کہ ’میری بیٹی کو ناحق قتل کیا گیا ہے ظاہر جعفر کو قرار واقعی سزا دی جائے۔ ‘

شوکت علی مقدم 2012 میں جنوبی کوریا اور 2014 میں قزاقستان میں پاکستان کے سفیر رہے ہیں۔

پولیس حکام کے مطابق ’گھر کے ملازمین نے نور مقدم کی چیخیں سُنیں جن کے بعد وقوعہ پیش آیا۔ گھر کے ایک ملازم ہی نے پولیس کو فون کر کے بتایا کہ یہاں ایمرجنسی ہے۔ پولیس جب موقع پر پہنچی تو قتل ہو چکا تھا اور ملزم مقتولہ کے خون میں لت پت تھا۔ پولیس نے جب ملزم کو حراست میں لینے کی کوشش کی تو اُس نے پولیس اہلکار پر حملہ بھی کیا جس کے بعد اس کو باندھ کر حراست میں لیا گیا۔‘

ظاہر جعفر، احمد جعفر کمپنی لمیٹڈ میں چیف برینڈ سٹریٹجسٹ ہیں اور خاندانی بزنس سنبھالے ہوئے ہیں۔ خاندانی ذرائع کے مطابق دونوں بچپن کے دوست تھے۔ اور قتل کی رات نور مقدم ملزم ظاہر جعفر کی رہائش گاہ موجود تھیں جہاں واقعہ پیش آیا۔

یہ بھی پڑھیے

Back to top button